منتخب اشعار

آ کے پتھر تو مرے صحن میں دو چار گرے 

جتنے اس پیڑ کے پھل تھے پس دیوار گرے 

شکیب جلالی

 

 

 

 

 

لوگ دشمن ہوئے اسی کے شکیبؔ 

کام جس مہربان سے نکلا 

شکیب جلالی

 

 

 

اتر کے ناؤ سے بھی کب سفر تمام ہوا 

زمیں پہ پاؤں دھرا تو زمین چلنے لگی 

شکیب جلالی

 

 

نہ اتنی تیز چلے سرپھری ہوا سے کہو 

شجر پہ ایک ہی پتا دکھائی دیتا ہے 

شکیب جلالی

 

 

جو موتیوں کی طلب نے کبھی اداس کیا 

تو ہم بھی راہ سے کنکر سمیٹ لائے بہت 

شکیب جلالی

 

 

عالم میں جس کی دھوم تھی اس شاہکار پر 

دیمک نے جو لکھے کبھی وہ تبصرے بھی دیکھ 

شکیب جلالی

 

 

 

فصیل جسم پہ تازہ لہو کے چھینٹے ہیں 

حدود وقت سے آگے نکل گیا ہے کوئی 

شکیب جلالی

 

 

گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا 

ہرا بھرا بدن اپنا درخت ایسا تھا 

شکیب جلالی

 

 

Leave a Comment

Your email address will not be published.